حضور یار بھی آنسو نکل ہی آتے ہیں

محمد دین تاثیر

حضور یار بھی آنسو نکل ہی آتے ہیں

محمد دین تاثیر

MORE BYمحمد دین تاثیر

    حضور یار بھی آنسو نکل ہی آتے ہیں

    کچھ اختلاف کے پہلو نکل ہی آتے ہیں

    مزاج ایک نظر ایک دل بھی ایک سہی

    معاملات من و تو نکل ہی آتے ہیں

    ہزار ہم سخنی ہو ہزار ہم نظری

    مقام جنبش ابرو نکل ہی آتے ہیں

    حنائے ناخن پا ہو کہ حلقۂ سر زلف

    چھپاؤ بھی تو یہ جادو نکل ہی آتے ہیں

    جناب شیخ وضو کے لیے سہی لیکن

    کسی بہانے لب جو نکل ہی آتے ہیں

    متاع عشق وہ آنسو جو دل میں ڈوب گئے

    زمیں کا رزق جو آنسو نکل ہی آتے ہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY