ابتدا بگڑی انتہا بگڑی

آتش بہاولپوری

ابتدا بگڑی انتہا بگڑی

آتش بہاولپوری

MORE BYآتش بہاولپوری

    ابتدا بگڑی انتہا بگڑی

    ابن آدم کی ہر ادا بگڑی

    چارہ سازوں کی چارہ سازی سے

    اور بیمار کی دشا بگڑی

    باز آیا نہ اپنی فطرت سے

    میری ناصح سے بارہا بگڑی

    بن گیا مرجع خلائق دشت

    شہر کی اس قدر فضا بگڑی

    نام رکھا گیا سموم اس کا

    لالہ و گل سے جب صبا بگڑی

    مے کدے میں بھی دیکھ کر نہ کہو

    نیت شیخ پارسا بگڑی

    ترک الفت کے بعد تو آتشؔ

    بات پہلے سے بھی سوا بگڑی

    مأخذ :
    • کتاب : Jada-e-manzil (Pg. 24)
    • Author : Atish Bahawalpuri
    • مطبع : Nirali Duniya Publications (2001)
    • اشاعت : 2001

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY