ابتدا سے ہم ضعیف و ناتواں پیدا ہوئے

میر انیس

ابتدا سے ہم ضعیف و ناتواں پیدا ہوئے

میر انیس

MORE BY میر انیس

    ابتدا سے ہم ضعیف و ناتواں پیدا ہوئے

    اڑ گیا جب رنگ رخ سے استخواں پیدا ہوئے

    خاکساری نے دکھائیں رفعتوں پر رفعتیں

    اس زمیں سے واہ کیا کیا آسماں پیدا ہوئے

    علم خالق کا خزانہ ہے میان کاف و نون

    ایک کن کہنے سے یہ کون و مکاں پیدا ہوئے

    ضبط دیکھو سب کی سن لی اور کچھ اپنی کہی

    اس زباں دانی پر ایسے بے زباں پیدا ہوئے

    شور بختی آئی حصے میں انہیں کے وا نصیب

    تلخ کامی کے لیے شیریں زباں پیدا ہوئے

    احتیاط جسم کیا انجام کو سوچو انیسؔ

    خاک ہونے کو یہ مشت استخواں پیدا ہوئے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY