ادھر سے دیکھیں تو اپنا مکان لگتا ہے

شمس الرحمن فاروقی

ادھر سے دیکھیں تو اپنا مکان لگتا ہے

شمس الرحمن فاروقی

MORE BYشمس الرحمن فاروقی

    ادھر سے دیکھیں تو اپنا مکان لگتا ہے

    اک اور زاویے سے آسمان لگتا ہے

    جو تم ہو پاس تو کہتا ہے مجھ کو چیر کے پھینک

    وہ دل جو وقت دعا بے زبان لگتا ہے

    شروع عشق میں سب زلف و خط سے ڈرتے ہیں

    اخیر عمر میں ان ہی میں دھیان لگتا ہے

    سرکنے لگتی ہے تب ہی قدم تلے سے زمین

    جب اپنے ہاتھ میں سارا جہان لگتا ہے

    دو چار گھاٹیاں اک دشت کچھ ندی نالے

    بس اس کے بعد ہمارا مکان لگتا ہے

    مآخذ:

    • کتاب : saugaat (4)(rekhta web site) (Pg. 374)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY