اک بے پناہ رات کا تنہا جواب تھا

یاسمین حمید

اک بے پناہ رات کا تنہا جواب تھا

یاسمین حمید

MORE BYیاسمین حمید

    اک بے پناہ رات کا تنہا جواب تھا

    چھوٹا سا اک دیا جو سر احتساب تھا

    رستہ مرا تضاد کی تصویر ہو گیا

    دریا بھی بہہ رہا تھا جہاں پر سراب تھا

    وہ وقت بھی عجیب تھا حیران کر گیا

    واضح تھا زندگی کی طرح اور خواب تھا

    پہلے پڑاؤ سے ہی اسے لوٹنا پڑا

    لمبی مسافتوں سے جسے اجتناب تھا

    پھر بے نمو زمین تھی اور خشک تھے شجر

    بے ابر آسماں کا چلن کامیاب تھا

    اک بے قیاس بات سے منسوب ہو گیا

    پھیلا ہوا حروف میں جو اضطراب تھا

    اپنی نگاہ پر بھی کروں اعتبار کیا

    کس مان پر کہوں وہ مرا انتخاب تھا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY