اک بے قرار دل سے ملاقات کیجیے

نوشاد علی

اک بے قرار دل سے ملاقات کیجیے

نوشاد علی

MORE BYنوشاد علی

    اک بے قرار دل سے ملاقات کیجیے

    جب مل گئے ہیں آپ تو کچھ بات کیجیے

    پہلے پہل ہوا ہے مری زندگی میں دن

    زلفوں میں منہ چھپا کے نہ پھر رات کیجیے

    نظروں سے گفتگو کی حدیں ختم ہو چکیں

    جو دل میں ہے زباں سے وہی بات کیجیے

    کل انتقام لے نہ مرا پیار آپ سے

    اتنا ستم نہ آج مرے ساتھ کیجیے

    بس ایک خامشی ہے ہر اک بات کا جواب

    کتنے ہی زندگی سے سوالات کیجیے

    نظریں ملا ملا کے نظر پھیر پھیر کے

    مجروح اور دل کے نہ حالات کیجیے

    دل کے سوا کسی کو نہیں جن کی کچھ خبر

    دنیا سے کیا بیاں وہ حکایات کیجیے

    مأخذ :
    • کتاب : Mujalla Dastavez (Pg. 269)
    • Author : Aziz Nabeel
    • مطبع : Edarah Dastavez (2010)
    • اشاعت : 2010

    موضوعات :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY