اک دل میں تھا اک سامنے دریا اسے کہنا

یاسمین حبیب

اک دل میں تھا اک سامنے دریا اسے کہنا

یاسمین حبیب

MORE BYیاسمین حبیب

    اک دل میں تھا اک سامنے دریا اسے کہنا

    ممکن تھا کہاں پار اترنا اسے کہنا

    ہجراں کے سمندر میں ہیولیٰ تھا کسی کا

    امکاں کے بھنور سے کوئی ابھرا اسے کہنا

    اک حرف کی کرچی مرے سینے میں چھپی تھی

    پہروں تھا کوئی ٹوٹ کے رویا اسے کہنا

    مدت ہوئی خورشید گہن سے نہیں نکلا

    ایسا کہیں تارا کوئی ٹوٹا اسے کہنا

    جاتی تھی کوئی راہ اکیلی کسی جانب

    تنہا تھا سفر میں کوئی سایا اسے کہنا

    ہر زخم میں دھڑکن کی صدا گونج رہی تھی

    اک حشر کا تھا شور شرابہ اسے کہنا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY