اک کھلا میداں تماشا گاہ کے اس پار ہے

محمد اظہار الحق

اک کھلا میداں تماشا گاہ کے اس پار ہے

محمد اظہار الحق

MORE BY محمد اظہار الحق

    اک کھلا میداں تماشا گاہ کے اس پار ہے

    جس میں ہر رقاص کا اک آئنہ تیار ہے

    ریت کے ذریعے ہماری منزلیں اور ان کی ہم

    پس یہاں سمت سفر کا جاننا بے کار ہے

    رات اور طوفان ابر و باد میرے ہر طرف

    دور لو دیتی ہوئی اک مشعل رخسار ہے

    پھر کبھی اٹھے تو مل لیں گے نہ اتنے دکھ اٹھا

    موت سے ہوتا ہوا اک راستہ ہموار ہے

    اس طرح باب نصیحت کھول کر بیٹھے ہیں لوگ

    جیسے خیر و شر کا دنیا میں کوئی معیار ہے

    لہر وہ آئی کہ ہم ہیں اور نشیب گمرہی

    غم کے آگے بند اب کے باندھنا دشوار ہے

    سلسلہ آواز کا دیکھو کہ خوشے سرسرائے

    پھر کھنک ہے دھات کی پھر سانپ کی پھنکار ہے

    مآخذ:

    • Book: meyaar (Pg. 386)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites