اک لہر سی دیکھی گئی پائے نہ گئے ہم

محب عارفی

اک لہر سی دیکھی گئی پائے نہ گئے ہم

محب عارفی

MORE BYمحب عارفی

    اک لہر سی دیکھی گئی پائے نہ گئے ہم

    حالانکہ یہیں تھے کہیں آئے نہ گئے ہم

    گرداب میں کیا ہے جسے طوفان مٹائے

    ہاں گردش دوراں سے مٹائے نہ گئے ہم

    پالا تھا اسے باد سے باراں سے بچا کر

    جس آگ سے اے شمع بچائے نہ گئے ہم

    ہیں بند یہ کس آئینہ خانے میں کہ باہر

    نایاب نظارے نظر آئے، نہ گئے ہم

    مأخذ :
    • کتاب : Range-e-Gazal (Pg. 320)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY