اک پل جیتا ہے تو طاہرؔ اک پل مرتا رہتا ہے

طاہر عدیم

اک پل جیتا ہے تو طاہرؔ اک پل مرتا رہتا ہے

طاہر عدیم

MORE BYطاہر عدیم

    اک پل جیتا ہے تو طاہرؔ اک پل مرتا رہتا ہے

    میرا دل سینے کے اندر ماتم کرتا رہتا ہے

    اس کی ضد اور دل کی خواہش کے مابین نہ جانے کیوں

    ریزہ ریزہ سوچوں کا دیوان بکھرتا رہتا ہے

    بعض اوقات میں یوں بھی اس کو رونے پر اکساتا ہوں

    رو کر اس کا سندر چہرہ اور سنورتا رہتا ہے

    جان تو مجھ کو پہلے سے بھی زیادہ اب یاد آیا کر

    تیرے یاد آنے سے میرا درد سنورتا رہتا ہے

    جب تک تیری بھیگی پلکیں اشک لٹاتی رہتی ہیں

    میرے سر سے اندیشوں کا سیل گزرتا رہتا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے