اک پل کی دوڑ دھوپ میں ایسا تھکا بدن

پریم کمار نظر

اک پل کی دوڑ دھوپ میں ایسا تھکا بدن

پریم کمار نظر

MORE BYپریم کمار نظر

    اک پل کی دوڑ دھوپ میں ایسا تھکا بدن

    میں خود تو جاگتا ہوں مگر سو گیا بدن

    بچہ بھی دیکھ لے تو ہمک کر لپک پڑے

    ایسی ہی ایک چیز ہے وہ دودھیا بدن

    جی چاہتا ہے ہاتھ لگا کر بھی دیکھ لیں

    اس کا بدن قبا ہے کہ اس کی قبا بدن

    جب سے چلا ہے تنگ قمیصوں کا یہ رواج

    نا آشنا بدن بھی لگے آشنا بدن

    گنگا کے پانیوں سا پوتر کہیں جسے

    آنکھوں کے تٹ پہ تیرتا ہے جو گیا بدن

    بستر پہ تیرے میرے سوا اور کون ہے

    محسوس ہو رہا ہے کوئی تیسرا بدن

    دھرتی نے موسموں کا اثر کر لیا قبول

    رت پھر گئی تو ہو گیا اس کا ہرا بدن

    اس کو کہاں کہاں سے رفو کیجیے نظرؔ

    بہتر یہی ہے اوڑھیے اب دوسرا بدن

    موضوعات :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY