اک راز غم دل جب خود رہ نہ سکا دل تک

علیم مسرور

اک راز غم دل جب خود رہ نہ سکا دل تک

علیم مسرور

MORE BYعلیم مسرور

    اک راز غم دل جب خود رہ نہ سکا دل تک

    ہونے دو یہ رسوائی تم تک ہو کہ محفل تک

    افسانہ محبت کا پورا ہو تو کیسے ہو

    کچھ ہے دل قاتل تک کچھ ہے دل بسمل تک

    بس ایک نظر جس کی آتش زن محفل ہے

    وہ برق مجسم ہے محدود مرے دل تک

    یہ راہ محبت ہے سب اس میں برابر ہیں

    بھٹکے ہوئے راہی سے خضر رہ منزل تک

    ہے عزم جواں سب کچھ طوفان حوادث میں

    ساحل کا بھروسہ کیا یہ جاتا ہے ساحل تک

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY