اک روز میں بھی باغ عدن کو نکل گیا

ثروت حسین

اک روز میں بھی باغ عدن کو نکل گیا

ثروت حسین

MORE BYثروت حسین

    اک روز میں بھی باغ عدن کو نکل گیا

    توڑی جو شاخ رنگ فشاں ہاتھ جل گیا

    دیوار و سقف و بام نئے لگ رہے ہیں سب

    یہ شہر چند روز میں کتنا بدل گیا

    میں سو رہا تھا اور مری خواب گاہ میں

    اک اژدہا چراغ کی لو کو نگل گیا

    بچپن کی نیند ٹوٹ گئی اس کی چاپ سے

    میرے لبوں سے نغمۂ صبح ازل گیا

    تنہائی کے الاؤ سے روشن ہوا مکاں

    ثروتؔ جو دل کا درد تھا نغموں میں ڈھل گیا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    اک روز میں بھی باغ عدن کو نکل گیا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY