ان آنکھوں نے کیا کیا تماشا نہ دیکھا

داغؔ دہلوی

ان آنکھوں نے کیا کیا تماشا نہ دیکھا

داغؔ دہلوی

MORE BYداغؔ دہلوی

    ان آنکھوں نے کیا کیا تماشا نہ دیکھا

    حقیقت میں جو دیکھنا تھا نہ دیکھا

    تجھے دیکھ کر وہ دوئی اٹھ گئی ہے

    کہ اپنا بھی ثانی نہ دیکھا نہ دیکھا

    ان آنکھوں کے قربان جاؤں جنہوں نے

    ہزاروں حجابوں میں پروانہ دیکھا

    نہ ہمت نہ قسمت نہ دل ہے نہ آنکھیں

    نہ ڈھونڈا نہ پایا نہ سمجھا نہ دیکھا

    مریضان الفت کی کیا بے کسی ہے

    مسیحا کو بھی چارہ فرما نہ دیکھا

    بہت درد مندوں کو دیکھا ہے تو نے

    یہ سینہ یہ دل یہ کلیجا نہ دیکھا

    وہ کب دیکھ سکتا ہے اس کی تجلی

    جس انسان نے اپنا ہی جلوا نہ دیکھا

    بہت شور سنتے تھے اس انجمن کا

    یہاں آ کے جو کچھ سنا تھا نہ دیکھا

    صفائی ہے باغ محبت میں ایسی

    کہ باد صبا نے بھی تنکا نہ دیکھا

    اسے دیکھ کر اور کو پھر جو دیکھے

    کوئی دیکھنے والا ایسا نہ دیکھا

    وہ تھا جلوہ آرا مگر تو نے موسیٰ

    نہ دیکھا نہ دیکھا نہ دیکھا نہ دیکھا

    گیا کارواں چھوڑ کر مجھ کو تنہا

    ذرا میرے آنے کا رستا نہ دیکھا

    کہاں نقش اول کہاں نقش ثانی

    خدا کی خدائی میں تجھ سا نہ دیکھا

    تری یاد ہے یا ہے تیرا تصور

    کبھی داغؔ کو ہم نے تنہا نہ دیکھا

    مآخذ
    • کتاب : Yadgar-e-Dagh (Pg. 37)
    • Author : Ahmed Nadiim Qasmii
    • مطبع : Malik Book Depo, Lahore (1984)
    • اشاعت : 1984

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY