اقرار وفا امید کرم کچھ کہہ نہ سکے کچھ بھول گئے

سرور عالم راز

اقرار وفا امید کرم کچھ کہہ نہ سکے کچھ بھول گئے

سرور عالم راز

MORE BYسرور عالم راز

    اقرار وفا امید کرم کچھ کہہ نہ سکے کچھ بھول گئے

    وعدے وہ ترے مبہم مبہم کچھ کہہ نہ سکے کچھ بھول گئے

    سرشاریٔ الفت کا عالم کچھ کہہ نہ سکے کچھ بھول گئے

    جذبات کی وہ دھیمی سرگم کچھ کہہ نہ سکے کچھ بھول گئے

    آلام کی وہ یورش پیہم کچھ کہہ نہ سکے کچھ بھول گئے

    ڈوبی ہوئی نبضوں کا عالم کچھ کہہ نہ سکے کچھ بھول گئے

    یادوں کی خلش وہ شام و سحر مایوس سے وہ دیوار و در

    احساس کی لو مدھم مدھم کچھ کہہ نہ سکے کچھ بھول گئے

    کیا وہم و گماں کیا علم و یقیں کیا فکر و غم دنیا و دیں

    ہستی کے وہ سارے پیچ و خم کچھ کہہ نہ سکے کچھ بھول گئے

    وہ شعر مجسم جان سخن ہر سانس میں یوں ہے نغمہ زن

    افسانۂ غم روداد الم کچھ کہہ نہ سکے کچھ بھول گئے

    کب دور خزاں آیا اور کب رخصت وہ گل رعنائی ہوا

    محرومئ جاں مجبوریٔ غم کچھ کہہ نہ سکے کچھ بھول گئے

    دل ایسے پرانے پاپی کو کیا کام ہے دین و ایماں سے

    وہ ساز کلیسا سوز حرم کچھ کہہ نہ سکے کچھ بھول گئے

    عنوان یہی ٹھہرے سرورؔ افسانۂ ہستی کے تیرے

    یا قلب حزیں یا دیدۂ نم کچھ کہہ نہ سکے کچھ بھول گئے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY