اس شہر طلسمات کا دستور عجب ہے

خالد صدیقی

اس شہر طلسمات کا دستور عجب ہے

خالد صدیقی

MORE BYخالد صدیقی

    اس شہر طلسمات کا دستور عجب ہے

    ہر شخص فسردہ ہے مگر خندہ بہ لب ہے

    جیسے گھنے جنگل میں کوئی آگ لگا دے

    اس شہر میں سورج کا نکلنا بھی غضب ہے

    بے کار ہے بے معنی ہے اخبار کی سرخی

    لکھا ہے جو دیوار پہ وہ غور طلب ہے

    کیا مجھ کو اٹھائے گا کوئی میری جگہ سے

    پتھر ہوں جو تعمیر کی بنیاد کا رب ہے

    جو آنکھ کی پتلی میں رہا نور کی صورت

    وہ شخص مرے گھر کے اندھیرے کا سبب ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Funoon (Monthly) (Pg. 555)
    • Author : Ahmad Nadeem Qasmi
    • مطبع : 4 Maklood Road, Lahore (25Edition Nov. Dec. 1986)
    • اشاعت : 25Edition Nov. Dec. 1986

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY