اس شہر میں چلتی ہے ہوا اور طرح کی

منصور عثمانی

اس شہر میں چلتی ہے ہوا اور طرح کی

منصور عثمانی

MORE BYمنصور عثمانی

    اس شہر میں چلتی ہے ہوا اور طرح کی

    جرم اور طرح کے ہیں سزا اور طرح کی

    اس بار تو پیمانہ اٹھایا بھی نہیں تھا

    اس بار تھی رندوں کی خطا اور طرح کی

    ہم آنکھوں میں آنسو نہیں لاتے ہیں کہ ہم نے

    پائی ہے وراثت میں ادا اور طرح کی

    اس بات پہ ناراض تھا ساقی کہ سر بزم

    کیوں آئی پیالوں سے صدا اور طرح کی

    اس دور میں مفہوم محبت ہے تجارت

    اس دور میں ہوتی ہے وفا اور طرح کی

    شبنم کی جگہ آگ کی بارش ہو مگر ہم

    منصورؔ نہ مانگیں گے دعا اور طرح کی

    مأخذ :
    • کتاب : Kashmakash (Pg. 116)
    • Author : Mansoor Usmani
    • مطبع : Najma House, Baradari, Moradabad (2007)
    • اشاعت : 2007

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY