اسے سامان سفر جان یہ جگنو رکھ لے

راحت اندوری

اسے سامان سفر جان یہ جگنو رکھ لے

راحت اندوری

MORE BYراحت اندوری

    اسے سامان سفر جان یہ جگنو رکھ لے

    راہ میں تیرگی ہوگی مرے آنسو رکھ لے

    تو جو چاہے تو ترا جھوٹ بھی بک سکتا ہے

    شرط اتنی ہے کہ سونے کی ترازو رکھ لے

    وہ کوئی جسم نہیں ہے کہ اسے چھو بھی سکیں

    ہاں اگر نام ہی رکھنا ہے تو خوشبو رکھ لے

    تجھ کو ان دیکھی بلندی میں سفر کرنا ہے

    احتیاطاً مری ہمت مرے بازو رکھ لے

    مری خواہش ہے کہ آنگن میں نہ دیوار اٹھے

    مرے بھائی مرے حصے کی زمیں تو رکھ لے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY