عشق جب تک نہ آس پاس رہا

ظہیر کاشمیری

عشق جب تک نہ آس پاس رہا

ظہیر کاشمیری

MORE BYظہیر کاشمیری

    عشق جب تک نہ آس پاس رہا

    حسن تنہا رہا اداس رہا

    اک حسیں واہمہ حسیں دھوکا

    مدتوں مرکز قیاس رہا

    عشق کو اجنبی سمجھ کے ملا

    حسن کتنا ادا شناس رہا

    فصل گل میں ہجوم گل کی جگہ

    ہر طرف اک ہجوم یاس رہا

    کس کا دامن رہا ہے بے پیوند

    کون آسودۂ لباس رہا

    وہ جسے تیرا مستقل غم ہے

    تیری محفل میں بھی اداس رہا

    ہائے وہ خندۂ خفی کہ ظہیرؔ

    دل پشیمان التماس رہا

    مآخذ :
    • کتاب : kulliyat-e-zahiir (Pg. 42)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY