عشق جنموں کا ہے سفر شاید

اجیت سنگھ حسرت

عشق جنموں کا ہے سفر شاید

اجیت سنگھ حسرت

MORE BY اجیت سنگھ حسرت

    عشق جنموں کا ہے سفر شاید

    ختم ہوگا نہ عمر بھر شاید

    آج کچا گھڑا ہے ناؤ مری

    پار لگ جاؤں ڈوب کر شاید

    حرف مطلب سنا کے رو دینا

    کام کر جائے چشم تر شاید

    خود کو ہم بارہا پکار آئے

    آج ہم بھی نہیں تھے گھر شاید

    اور کرنی ہے جستجو اپنی

    اور پھرنا ہے در بدر شاید

    کون پاگل کو کو بہ کو ڈھونڈے

    پھر رہا ہو نگر نگر شاید

    شب گئے اٹھ کے یاد کر اس کو

    یوں دعاؤں میں ہو اثر شاید

    آ کے منزل پہ سو گیا راہی

    ختم ہے بس یہیں سفر شاید

    بن سنور کر رہا کرو حسرتؔ

    اس کی پڑ جائے اک نظر شاید

    مآخذ:

    • کتاب : Tanveer-e-Fan (Pg. 58)
    • Author : Author Ajeet Singh 'Hasrat',Compiled by Dr. Keval Dheer, Mitr Nikodari
    • مطبع : Dr. Bhajan Singh, 189 Model Gram, Ludhiana-02 (2006)
    • اشاعت : 2006

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY