عشق کے ہاتھوں میں پرچم کے سوا کچھ بھی نہیں

عروج زیدی بدایونی

عشق کے ہاتھوں میں پرچم کے سوا کچھ بھی نہیں

عروج زیدی بدایونی

MORE BYعروج زیدی بدایونی

    عشق کے ہاتھوں میں پرچم کے سوا کچھ بھی نہیں

    اس کا عالم تیرے عالم کے سوا کچھ بھی نہیں

    بے یقینی سوئے ظن ایمان ناقص کی دلیل

    فکر راحت خطرۂ غم کے سوا کچھ بھی نہیں

    ہم سے پوچھو ہم بتائیں غایت کون و مکاں

    کار گاہ ابن آدم کے سوا کچھ بھی نہیں

    آتش نفرت سے اب دنیا ہے ایسے موڑ پر

    دیدہ ور گو یہ جہنم کے سوا کچھ بھی نہیں

    یاد ایامے کہ یہ بھی جان رزم و بزم تھے

    جن کے پاس اب چشم پر نم کے سوا کچھ بھی نہیں

    ہم نہیں منجملہ اہل رضا کیوں کر کہیں

    جن کے لب پر قصۂ غم کے سوا کچھ بھی نہیں

    اہل دنیا کے لیے جو ابر نیساں تھا عروجؔ

    اب وہ انساں اشک شبنم کے سوا کچھ بھی نہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY