عشق کی راہ میں یوں حد سے گزر مت جانا

والی آسی

عشق کی راہ میں یوں حد سے گزر مت جانا

والی آسی

MORE BYوالی آسی

    عشق کی راہ میں یوں حد سے گزر مت جانا

    ہوں گھڑے کچے تو دریا میں اتر مت جانا

    پانچویں سمت نجومی نے اشارہ کر کے

    شاہزادے سے کہا تھا کہ ادھر مت جانا

    ہم انہی تپتی ہوئی راہوں میں مل جائیں گے

    کوئی سایہ تمہیں روکے تو ٹھہر مت جانا

    گھر کے جیسا کہیں آرام نہیں پاؤ گے

    کوئی کہتا ہے کہ اب چھوڑ کے گھر مت جانا

    سر اٹھائے ہوئے چلنا نہ کبھی دنیا میں

    کبھی مقتل میں جھکائے ہوئے سر مت جانا

    عشق کے تم تو طرف دار بہت ہو والیؔ

    بات پڑ جائے تو اے یار مکر مت جانا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    عشق کی راہ میں یوں حد سے گزر مت جانا نعمان شوق

    مآخذ
    • کتاب : Mom (Pg. 109)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY