عشق کیا ہے بے بسی ہے بے بسی کی بات کر

اورنگ زیب

عشق کیا ہے بے بسی ہے بے بسی کی بات کر

اورنگ زیب

MORE BY اورنگ زیب

    عشق کیا ہے بے بسی ہے بے بسی کی بات کر

    یہ بھی کوئی زندگی ہے زندگی کی بات کر

    کرب سے ٹوٹا نہیں میں درد سے مرتا نہیں

    مجھ پہ طاری بے حسی ہے بے حسی کی بات کر

    وقت سے لڑتا ہوا تقدیر سے الجھا ہوا

    میں نہیں ہوں سرکشی ہے سرکشی کی بات کر

    تو خدا جس کو بنانے پر بضد ہے نا سمجھ

    وہ فقط اک آدمی ہے آدمی کی بات کر

    وقت کب کا مر چکا ہے آج بھی زندہ ہوں میں

    تو نہیں تو کیا کمی ہے اس کمی کی بات کر

    فاعلاتن فاعلن سے ہم بھی واقف ہیں مگر

    یہ ہماری شاعری ہے شاعری کی بات کر

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY