عشق میں بو ہے کبریائی کی

بقا اللہ بقاؔ

عشق میں بو ہے کبریائی کی

بقا اللہ بقاؔ

MORE BY بقا اللہ بقاؔ

    عشق میں بو ہے کبریائی کی

    عاشقی جس نے کی خدائی کی

    ہم سری مت صبا سے کر اے آہ

    تو نے بھی کچھ گرہ کشائی کی

    لے چلے ہم قفس سے اے صیاد

    خاک میں آرزو رہائی کی

    روز محشر تلک نہ آخر ہوں

    داستانیں شب جدائی کی

    شیخ جیو سے ہوئی نہ سرزد باو

    چول بولی ہے چارپائی کی

    جس میں یاران بزم ہوں محظوظ

    یوں بقاؔ میں غزل سرائی کی

    میر بھی ورنہ خوب کہتے ہیں

    کاٹیے جیب ان کی دائی کی

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY