اسی معمول روز و شب میں جی کا دوسرا ہونا

سہیل احمد زیدی

اسی معمول روز و شب میں جی کا دوسرا ہونا

سہیل احمد زیدی

MORE BYسہیل احمد زیدی

    اسی معمول روز و شب میں جی کا دوسرا ہونا

    حوادث کے تسلسل میں ذرا سا کچھ نیا ہونا

    ہمیں تو دل کو بہلانا پڑا حیلے حوالے سے

    تمہیں کیسا لگا بستی کا بے صوت و صدا ہونا

    صنم بنتے ہیں پتھر جب الگ ہوتے ہیں ٹکرا کر

    عجب کار عبث مٹی کا مٹی سے جدا ہونا

    مگر پھر زندگی بھر بندگی دنیا کی ہے ورنہ

    کسے اچھا نہیں لگتا ہے تھوڑا سا خدا ہونا

    مٹانا نقش اس کے باغ کی کہنہ فصیلوں سے

    ہرے پتوں پہ اس کے نام نامی کا لکھا ہونا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY