اتنے دن کے بعد تو آیا ہے آج (ردیف .. ن)

اطہر نفیس

اتنے دن کے بعد تو آیا ہے آج (ردیف .. ن)

اطہر نفیس

MORE BYاطہر نفیس

    اتنے دن کے بعد تو آیا ہے آج

    سوچتا ہوں کس طرح تجھ سے ملوں

    میرے اندر جاگ اٹھی اک چاندنی

    میں زمیں سے آسماں تک انگ ہوں

    اور اجلا ہو گیا قربت کا چاند

    اور گہرا ہو گیا تیرا فسوں

    اے سراپا رنگ نکہت تو بتا

    کس دھنک سے تیرا پیراہن بنوں

    سارے گل بوٹے تر و تازہ ہوئے

    دور تک پہنچی ہے میری موج خوں

    کر رہے ہیں لمحے لمحے کا حساب

    مل کے پھر بیٹھے ہیں یاران جنوں

    دشت غم کی دھوپ میں مجھ پر کھلا

    میں خود اپنا سایہء دیوار ہوں

    ناز کر خود پر کہ تو ہے بے شمار

    قدر کر میری کہ میں بس ایک ہوں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY