جام دے اور نہ کر وقت پہ تکرار کہ بس

معروف دہلوی

جام دے اور نہ کر وقت پہ تکرار کہ بس

معروف دہلوی

MORE BYمعروف دہلوی

    جام دے اور نہ کر وقت پہ تکرار کہ بس

    ساقیا ابر اٹھا ہے یہ دھواں دھار کہ بس

    کیا تماشا ہے جو کل رات وہ لائے تشریف

    بے خودی نے یہ لیا آن کے یکبار کہ بس

    کیوں نہ دل ایسے کو دوں میں نے کل ان سے جو کہا

    درد ہوتا ہے مرے دل میں یہ اے یار کہ بس

    سنتے ہی ہو کہ ہم آغوش کہا ہنس کے تجھے

    درد دل کی ہے دوا اور بھی درکار کہ بس

    رشک سے کیوں نہ جلے مہر درخشاں معروفؔ

    ہے مرے یار کی یہ گرمئ بازار کہ بس

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY