جاں سپاری کے بھی ارماں زندگی کی آس بھی

اختر انصاری

جاں سپاری کے بھی ارماں زندگی کی آس بھی

اختر انصاری

MORE BYاختر انصاری

    جاں سپاری کے بھی ارماں زندگی کی آس بھی

    حفظ ناموس الم بھی نیش غم کا پاس بھی

    خاک در بر ہی سہی میں خاک بھی وہ خاک ہے

    جس میں میرے زخم دل کی بو بھی ہے اور باس بھی

    کتنے دور چرخ ان آنکھوں نے دیکھے کچھ نہ پوچھ

    مٹ چکا ہے وقت کی رفتار کا احساس بھی

    ہائے وہ اک نشتر آگیں نیشتر افروز یاد

    جس کے آگے ہیچ اپنی برش انفاس بھی

    ہم نہ تھے کچھ خود ہی اس سودے پہ راضی ورنہ یوں

    راس آنے کو یہ دنیا آ ہی جاتی راس بھی

    خود کو اے دل یاس کامل کے حوالے یوں نہ کر

    جھانکتی ہے ذہن کے غرفے سے کوئی آس بھی

    کون اس وادی سے اچھلا تا سر عرش بریں

    گم ہیں جس وادی میں اخترؔ خضر بھی الیاس بھی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے