جانے کس بات سے دکھا ہے بہت

آلوک مشرا

جانے کس بات سے دکھا ہے بہت

آلوک مشرا

MORE BY آلوک مشرا

    جانے کس بات سے دکھا ہے بہت

    دل کئی روز سے خفا ہے بہت

    سب ستارے دلاسہ دیتے ہیں

    چاند راتوں کو چیختا ہے بہت

    پھر وہی رات مجھ میں ٹھہری ہے

    پھر سماعت میں شور سا ہے بہت

    تم زمانے کی بات کرتے ہو

    میرا مجھ سے بھی فاصلہ ہے بہت

    اس کی دکھتی نسیں نہ پھٹ جائیں

    دل مسلسل یہ سوچتا ہے بہت

    واسطہ کچھ ضرور ہے تم سے

    تم کو وہ شخص پوچھتا ہے بہت

    تم سے بچھڑا تو ٹوٹ جائے گا

    اس کی آنکھوں میں حوصلہ ہے بہت

    چکھ کے دیکھو اسے کبھی تم بھی

    اس اداسی میں ذائقہ ہے بہت

    ان کی سانسیں گنی چنی ہیں بس

    خون لمحوں کا بہہ گیا ہے بہت

    دشت کو کر لیا تھا گھر میں نے

    اب مجھے گھر یہ کاٹتا ہے بہت

    اس سے باہر نکل نہ پاؤ گے

    دشت ماضی کا یہ گھنا ہے بہت

    میرا سکھ دکھ سمجھتی ہیں غزلیں

    زندگی کو یہ آسرا ہے بہت

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    آلوک مشرا

    آلوک مشرا

    RECITATIONS

    آلوک مشرا

    آلوک مشرا

    آلوک مشرا

    جانے کس بات سے دکھا ہے بہت آلوک مشرا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY