جانے کیا سوچ کے ہم تجھ سے وفا کرتے ہیں

کیلاش ماہر

جانے کیا سوچ کے ہم تجھ سے وفا کرتے ہیں

کیلاش ماہر

MORE BYکیلاش ماہر

    جانے کیا سوچ کے ہم تجھ سے وفا کرتے ہیں

    قرض ہے پچھلے جنم کا سو ادا کرتے ہیں

    کیا ہوا جام اٹھاتے ہی بھر آئیں آنکھیں

    ایسے طوفان تو ہر شام اٹھا کرتے ہیں

    دل کے زخموں پہ نہ جاؤ کہ بڑی مدت سے

    یہ دیے یوں ہی سر شام جلا کرتے ہیں

    کون ہے جس کا مقدر نہ بنی تنہائی

    کیا ہوا ہم بھی اگر تجھ سے گلا کرتے ہیں

    رشتۂ درد کی میراث ملی ہے ہم کو

    ہم ترے نام پہ جینے کی خطا کرتے ہیں

    مأخذ :
    • کتاب : sheerazah (Pg. 52)
    • Author : makhmoor saeedi,Parem Gopal Mittal
    • مطبع : P -K Publication 3072 Partap stareet gola Market -Daryaganj delhi-6 (1973)
    • اشاعت : 1973

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY