جانے کیوں برباد ہونا چاہتا ہے

اشک الماس

جانے کیوں برباد ہونا چاہتا ہے

اشک الماس

MORE BYاشک الماس

    جانے کیوں برباد ہونا چاہتا ہے

    صورت فرہاد ہونا چاہتا ہے

    ذہن سے آخر میں اب تھک ہار کر

    میرا دل آباد ہونا چاہتا ہے

    آسماں والے یہ سن کر ہنس پڑے

    آدمی آزاد ہونا چاہتا ہے

    ہر جگہ تعمیر کر کے اک ارم

    ہر کوئی شداد ہونا چاہتا ہے

    سانحہ یہ ہے کہ اک بلبل کا دل

    دامن صیاد ہونا چاہتا ہے

    ہو کے منصف تخت پہ اب جلوہ گر

    واقف روداد ہونا چاہتا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY