جانے یہ کیسا زہر دلوں میں اتر گیا

امید فاضلی

جانے یہ کیسا زہر دلوں میں اتر گیا

امید فاضلی

MORE BYامید فاضلی

    جانے یہ کیسا زہر دلوں میں اتر گیا

    پرچھائیں زندہ رہ گئی انسان مر گیا

    بربادیاں تو میرا مقدر ہی تھیں مگر

    چہروں سے دوستوں کے ملمع اتر گیا

    اے دوپہر کی دھوپ بتا کیا جواب دوں

    دیوار پوچھتی ہے کہ سایہ کدھر گیا

    اس شہر میں فراش طلب ہے ہر ایک راہ

    وہ خوش نصیب تھا جو سلیقے سے مر گیا

    کیا کیا نہ اس کو زعم مسیحائی تھا امیدؔ

    ہم نے دکھائے زخم تو چہرہ اتر گیا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    امید فاضلی

    امید فاضلی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY