جانتا ہوں کہ کئی لوگ ہیں بہتر مجھ سے

فیضی

جانتا ہوں کہ کئی لوگ ہیں بہتر مجھ سے

فیضی

MORE BYفیضی

    جانتا ہوں کہ کئی لوگ ہیں بہتر مجھ سے

    پھر بھی خواہش ہے کہ دیکھو کبھی مل کر مجھ سے

    سوچتا کیا ہوں ترے بارے میں چلتے چلتے

    تو ذرا پوچھنا یہ بات ٹھہر کر مجھ سے

    میں یہی سوچ کے ہر حال میں خوش رہتا ہوں

    روٹھ جائے نہ کہیں میرا مقدر مجھ سے

    مجھ پہ مت چھوڑ کہ پھر بعد میں پچھتائے گا

    فیصلے ٹھیک ہی ہو جاتے ہیں اکثر مجھ سے

    رات وہ خون رلاتی ہے اداسی دل کی

    رونے لگتا ہے لپٹ کر مرا بستر مجھ سے

    عہد آغاز محبت ترے انجام کی خیر

    اب اٹھائے نہیں اٹھتا ہے یہ پتھر مجھ سے

    مآخذ
    • کتاب : Ghazal Calendar-2015 (Pg. 13.10.2015)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY