جب عیاں صبح کو وہ نور مجسم ہو جائے

مرزارضا برق ؔ

جب عیاں صبح کو وہ نور مجسم ہو جائے

مرزارضا برق ؔ

MORE BYمرزارضا برق ؔ

    جب عیاں صبح کو وہ نور مجسم ہو جائے

    گوہر شبنم گل نیر اعظم ہو جائے

    مرثیہ ہو مجھے گانا جو سنوں فرقت میں

    بے ترے بزم غنا مجلس ماتم ہو جائے

    دیکھ کر طول شب ہجر دعا کرتا ہوں

    وصل کے روز سے بھی عمر مری کم ہو جائے

    دیکھ کر پھولوں کو انگاروں پہ لوٹوں اے گل

    بے ترے گلشن فردوس جہنم ہو جائے

    کم نہیں ملک سلیماں سے وصال ساقی

    گردش جام مجھے حلقۂ خاتم ہو جائے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے