جب بھی مجھ کو اپنا بچپن یاد آتا ہے

قیصر صدیقی

جب بھی مجھ کو اپنا بچپن یاد آتا ہے

قیصر صدیقی

MORE BYقیصر صدیقی

    جب بھی مجھ کو اپنا بچپن یاد آتا ہے

    بچپن کے اک پیار کا بچپن یاد آتا ہے

    دیکھ کے اس منہ زور جوانی کی منہ زوری

    مجھ کو اس کا توتلا بچپن یاد آتا ہے

    عورت ماں تھی بہن تھی دادی تھی نانی تھی

    کورے کاغذ جیسا بچپن یاد آتا ہے

    طوفانی بارش گھر میں سیلاب کا عالم

    ٹھنڈا چولہا بھوکا بچپن یاد آتا ہے

    تنہائی کا دکھ تو کم ہو کسی بہانے

    دیکھیں کس کا کس کا بچپن یاد آتا ہے

    شہد کے جیسی میٹھی بولی یاد آتی ہے

    دودھ کے جیسا اجلا بچپن یاد آتا ہے

    بچپن کے یاروں سے ملتا رہتا ہوں میں

    قیصرؔ مجھ کو سب کا بچپن یاد آتا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY