جب بھی اس کی خواہش رکھنا

حبیب کیفی

جب بھی اس کی خواہش رکھنا

حبیب کیفی

MORE BYحبیب کیفی

    جب بھی اس کی خواہش رکھنا

    اچھا ہے کچھ دانش رکھنا

    لاکھ منع کر دینے پر بھی

    جاری اپنی کوشش رکھنا

    میں نے محبت سکھلائی تھی

    سیکھا کس نے رنجش رکھنا

    دل مندر مسجد جیسا ہے

    دل میں نہ کوئی سازش رکھنا

    خواہش میں سر بھی جاتے ہیں

    سوچ سمجھ کر خواہش رکھنا

    چاہت کا مطلب ہوتا ہے

    دل میں زندہ آتش رکھنا

    ہنس دینے پر اس کے آگے

    کوئی مت فرمائش رکھنا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY