جب دل میں ذرا بھی آس نہ ہو اظہار تمنا کون کرے

آنند نرائن ملا

جب دل میں ذرا بھی آس نہ ہو اظہار تمنا کون کرے

آنند نرائن ملا

MORE BYآنند نرائن ملا

    جب دل میں ذرا بھی آس نہ ہو اظہار تمنا کون کرے

    ارمان کیے دل ہی میں فنا ارمان کو رسوا کون کرے

    خالی ہے مرا ساغر تو رہے ساقی کو اشارا کون کرے

    خودداریٔ سائل بھی تو ہے کچھ ہر بار تقاضا کون کرے

    جب اپنا دل خود لے ڈوبے اوروں پہ سہارا کون کرے

    کشتی پہ بھروسا جب نہ رہا تنکوں پہ بھروسا کون کرے

    آداب محبت میں بھی عجب دو دل ملنے کو راضی ہیں

    لیکن یہ تکلف حائل ہے پہلا وہ اشارا کون کرے

    دل تیری جفا سے ٹوٹ چکا اب چشم کرم آئی بھی تو کیا

    پھر لے کے اسی ٹوٹے دل کو امید دوبارا کون کرے

    جب دل تھا شگفتہ گل کی طرح ٹہنی کانٹا سی چبھتی تھی

    اب ایک فسردہ دل لے کر گلشن کی تمنا کون کرے

    بسنے دو نشیمن کو اپنے پھر ہم بھی کریں گے سیر چمن

    جب تک کہ نشیمن اجڑا ہے پھولوں کا نظارا کون کرے

    اک درد ہے اپنے دل میں بھی ہم چپ ہیں دنیا ناواقف

    اوروں کی طرح دہرا دہرا کر اس کو فسانا کون کرے

    کشتی موجوں میں ڈالی ہے مرنا ہے یہیں جینا ہے یہیں

    اب طوفانوں سے گھبرا کر ساحل کا ارادہ کون کرے

    ملاؔ کا گلا تک بیٹھ گیا بہری دنیا نے کچھ نہ سنا

    جب سننے والا ہو ایسا رہ رہ کے پکارا کون کرے

    مآخذ
    • کتاب : Kulliyat-e-Anand Narayan Mulla (Pg. 156)
    • Author : Anand Narayan Mull a
    • مطبع : Qaumi Council Baraye-farogh Urdu (2010)
    • اشاعت : 2010

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY