جب ہم بغل وہ سرو قبا پوش ہو گیا

منیرؔ  شکوہ آبادی

جب ہم بغل وہ سرو قبا پوش ہو گیا

منیرؔ  شکوہ آبادی

MORE BYمنیرؔ  شکوہ آبادی

    جب ہم بغل وہ سرو قبا پوش ہو گیا

    قمری کا طوق حلقۂ آغوش ہو گیا

    اشعار میرے سن کے وہ خاموش ہو گیا

    غنچہ برنگ گل ہمہ تن گوش ہو گیا

    پی غیر نے شراب مجھے بے خودی ہوئی

    نشہ چڑھا کسی کو میں بے ہوش ہو گیا

    اس درجہ بے خودی نے دکھائیں تعلیاں

    گردوں غبار قافلۂ ہوش ہو گیا

    تیغ اجل کی کاٹ سے ڈرتا نہیں ہوں میں

    زخموں سے جسم زار ذرہ پوش ہو گیا

    اے بت خیال وصف دہن میں نہ پائی راہ

    بھٹکا پھرا سخن جو میں خاموش ہو گیا

    خوں خواروں کے حضور نہ آیا ہماری طرح

    آئینہ جوہروں سے ذرہ پوش ہو گیا

    طالع جگائے آپ نے ارباب عشق کے

    یوسف کا حسن خواب فراموش ہو گیا

    پنہاں ہے زیر سبزۂ خط آتش عذار

    شعلہ فسون حسن سے خس پوش ہو گیا

    حوریں گلے لپٹتی ہیں آ آ کے رات دن

    جنت کی راہ کوچۂ آغوش ہو گیا

    اس مست حسن کی نگہ گرم کے حضور

    آئینۂ جام بادۂ سرجوش ہو گیا

    بے لطفیوں سے تم جو ملے میں نے جان دی

    پھانسی گلے میں حلقۂ آغوش ہو گیا

    ابر سیہ کے سایہ نے سرمہ کھلا دیا

    سبزہ تمام طوطی خاموش ہو گیا

    کاندھوں سے میرے کاتب اعمال گر پڑے

    تڑپا میں اس قدر کہ سبک دوش ہو گیا

    کانوں کا حسن جلوۂ عارض سے پڑ گیا

    رخ آفتاب صبح بنا گوش ہو گیا

    اڑتا ہوں عشق میں لب لعلیں کے اے منیرؔ

    گویا شرار آتش خاموش ہو گیا

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY