جب کبھی ترک غم دل کا سوال آتا ہے

علی عباس امید

جب کبھی ترک غم دل کا سوال آتا ہے

علی عباس امید

MORE BYعلی عباس امید

    جب کبھی ترک غم دل کا سوال آتا ہے

    ریت پر نام تھا میرا بھی خیال آتا ہے

    موج طوفان اٹھی بہہ چلے خوابوں کے صدف

    پھر برستے ہوئے بادل پہ زوال آتا ہے

    اب مرے خواب کے ہم راہ وہی یادیں ہیں

    جن کو معلوم نہ تھا شیشے میں بال آتا ہے

    جب سمٹ آیا ہے خود جسم ہی پیشانی پر

    کیوں در دل پہ دبے پاؤں ملال آتا ہے

    کیا ترا ذہن بھی لمحوں کے سفر میں ہوگا

    تیری بارات میں رہ رہ کے خیال آتا ہے

    کوئی ایسا بھی ہے جو نقش بہ دیوار نہ ہو

    اب یہ تعمیر کی راہوں میں سوال آتا ہے

    گھنٹیاں وقت کی بجتی ہیں مسلسل امیدؔ

    فاصلے کہتے ہیں اک اور بھی سال آتا ہے

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY