جب کوئی شام حسیں نذر خرابات ہوئی

مخمور سعیدی

جب کوئی شام حسیں نذر خرابات ہوئی

مخمور سعیدی

MORE BYمخمور سعیدی

    جب کوئی شام حسیں نذر خرابات ہوئی

    اکثر ایسے میں ترے غم سے ملاقات ہوئی

    آپ اپنے کو نہ پہچان سکے ہم تا دیر

    ان سے بچھڑے تو عجب صورت حالات ہوئی

    حسن سے نبھ نہ نہ سکی وضع کرم آخر تک

    اول اول تو محبت کی مدارات ہوئی

    روز مے پی ہے تمہیں یاد کیا ہے لیکن

    آج تم یاد نہ آئے یہ نئی بات ہوئی

    اس نے آواز میں آواز ملا دی تھی کبھی

    آج تک ختم نہ موسیقئ جذبات ہوئی

    دل پہ اک غم کی گھٹا چھائی ہوئی تھی کب سے

    آج ان سے جو ملے ٹوٹ کے برسات ہوئی

    کس کی پرچھائیں پڑی کون ادھر سے گزرا

    اتنی رنگیں جو گزر گاہ خیالات ہوئی

    ان سے امید ملاقات کے بعد اے مخمورؔ

    مدتوں تک نہ خود اپنے سے ملاقات ہوئی

    مأخذ :
    • کتاب : Beesveen Sadi Ki Behtareen Ishqiya Ghazlen (Pg. 197)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY