جب کوئی تیر حوادث کی کماں سے آیا

عباس رضوی

جب کوئی تیر حوادث کی کماں سے آیا

عباس رضوی

MORE BYعباس رضوی

    جب کوئی تیر حوادث کی کماں سے آیا

    نغمہ اک اور مرے مطرب جاں سے آیا

    ایک نظارے نے میرے لیے آنکھیں بھیجیں

    دل کسی کارگہہ شیشہ گراں سے آیا

    جب بھی اس دل نے ترے قرب کی دولت چاہی

    ایک سایہ سا نکل کر رگ جاں سے آیا

    میں نہ ڈرتا تھا عناصر کی ستم کوشی سے

    خوف آیا تو بس اک عمر رواں سے آیا

    کیا کروں خلعت و دستار کی خواہش کہ مجھے

    زیست کرنے کا سلیقہ بھی زیاں سے آیا

    میں تو اک خواب کو آنکھوں میں لیے پھرتا تھا

    یہ ستارہ مرے پہلو میں کہاں سے آیا

    مآخذ:

    • کتاب : Beesveen Sadi Ki Behtareen Ishqiya Ghazlen (Pg. 154)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY