جب تلک در پیش کوئی حادثہ ہوتا نہیں

ظفر محمود ظفر

جب تلک در پیش کوئی حادثہ ہوتا نہیں

ظفر محمود ظفر

MORE BYظفر محمود ظفر

    جب تلک در پیش کوئی حادثہ ہوتا نہیں

    زندگی کیا ہے ہمیں اس کا پتہ ہوتا نہیں

    سیدھا رستہ دیکھنے میں یوں تو ہے آساں مگر

    جب چلو اس پر تو یہ آسان سا ہوتا نہیں

    سب نے پہنی ہیں قبائیں شہر بھر میں ایک سی

    کون کیسا ہے یہاں اس کا پتہ ہوتا نہیں

    ہے یہ نا ممکن نظر آ جائے جلوہ گاہ ناز

    سجدہ گاہ عاشقاں پر نقش پا ہوتا نہیں

    ہم نہ دیکھیں یہ الگ سی بات ہے لیکن ظفرؔ

    کون سی شے ہے جہاں وہ رونما ہوتا نہیں

    مأخذ :
    • کتاب : خموش لب (Pg. 29)
    • Author : ظفر محمود
    • مطبع : عرشیہ پبلی کیشنز دہلی۔95 (2019)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے