جب تری ذات کو پھیلا ہوا دریا سمجھوں

فرحت عباس

جب تری ذات کو پھیلا ہوا دریا سمجھوں

فرحت عباس

MORE BYفرحت عباس

    جب تری ذات کو پھیلا ہوا دریا سمجھوں

    خود کو بھیگی ہوئی راتوں میں اکیلا سمجھوں

    نام لکھوں میں ترا دور خلاؤں میں کہیں

    اور ہر لفظ کو پھر چاند سے پیارا سمجھوں

    یاد کی جھیل میں جب عکس نظر آئے ترا

    آنکھ سے اشک بھی ٹپکے تو ستارا سمجھوں

    دستکیں دیتا رہا رات جو گلیوں میں اسے

    ذہن آوارہ کہوں نیند کا مارا سمجھوں

    وہ جو آ جائیں مرے پاس تو ان کو فرحتؔ

    دکھ کی بڑھتی ہوئی بارات کا دولہا سمجھوں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY