جب تجھ عرق کے وصف میں جاری قلم ہوا

ولی محمد ولی

جب تجھ عرق کے وصف میں جاری قلم ہوا

ولی محمد ولی

MORE BYولی محمد ولی

    جب تجھ عرق کے وصف میں جاری قلم ہوا

    عالم میں اس کا ناؤں جواہر رقم ہوا

    نقطے پہ تیرے خال کے باندھا ہے جن نے دل

    وو دائرہ میں عشق کے ثابت قدم ہوا

    تجھ فطرت بلند کی خوبی کوں لکھ قلم

    مشہور جگ کے بیچ عطارد رقم ہوا

    طاقت نہیں کہ حشر میں ہووے وو دادخواہ

    جس بے گنہ پہ تیری نگہ سوں ستم ہوا

    بے منت شراب ہوں سر شار انبساط

    تجھ نین کا خیال مجھے جام جم ہوا

    جن نے بیاں لکھا ہے مرے رنگ زرد کا

    اس کوں خطاب غیب سوں زریں رقم ہوا

    شہرت ہوئی ہے جب سے ترے شعر کی ولیؔ

    مشتاق تجھ سخن کا عرب تا عجم ہوا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY