کبھی تم مول لینے ہم کوں ہنس ہنس بھاؤ کرتے ہو

سراج اورنگ آبادی

کبھی تم مول لینے ہم کوں ہنس ہنس بھاؤ کرتے ہو

سراج اورنگ آبادی

MORE BYسراج اورنگ آبادی

    کبھی تم مول لینے ہم کوں ہنس ہنس بھاؤ کرتے ہو

    کبھی تیر نگاہ تند کا برساؤ کرتے ہو

    کبھی تم سرد کرتے ہو دلوں کی آگ گرمی سیں

    کبھی تم سرد مہری سیں جھٹک کر باؤ کرتے ہو

    کبھی تم صاف کرتے ہو مرے دل کی کدورت کوں

    کبھی تم بے سبب تیوری چڑھا کر تاؤ کرتے ہو

    کبھی تم موم ہو جاتے ہو جب میں گرم ہوتا ہوں

    کبھی میں سرد ہوتا ہوں تو تم بھڑکاؤ کرتے ہو

    کبھی لا لا مجھے دیتے ہو اپنے ہات سیں پیالا

    کبھی تم شیشۂ دل پر مرے پتھراؤ کرتے ہو

    کبھی تم دھول اڑاتے ہو مری غصے سیں روکھے ہو

    کبھی منہ پر حیا کا لا عرق چھڑکاؤ کرتے ہو

    کبھی خوش ہو کے کرتے ہو سراجؔ اپنے کی جاں بخشی

    کبھی اس کے بجھا دینے کوں کیا کیا داؤ کرتے ہو

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Siraj (Pg. 545)
    • Author : Siraj Aurangabadi
    • مطبع : Qaumi Council Baraye-Farogh Urdu (1982,1998)
    • اشاعت : 1982,1998

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے