جگا رہا ہے ترا غم نئے نئے جادو

نور بجنوری

جگا رہا ہے ترا غم نئے نئے جادو

نور بجنوری

MORE BYنور بجنوری

    جگا رہا ہے ترا غم نئے نئے جادو

    امنڈ رہی ہے غزل سے بہار کی خوشبو

    چہک رہے ہیں تصور کے باغ میں پنچھی

    بھٹک رہے ہیں خیالوں کے دشت میں آہو

    لچک رہا ہے فضاؤں میں خواب کا ریشم

    بکھر گئے ہیں افق تا افق ترے گیسو

    نہ جانے کون سی منزل پہ آ گیا ہوں میں

    نہ جانے کون سی بستی میں رہ گئی ہے تو

    مرے گلے میں حمائل ہیں ناز سے اب تک

    مجھے نہ چھوڑ سکے تیری یاد کے بازو

    کدھر ہو محتسبو پھر کوئی نیا منصور

    فراز دار سے چھلکا رہا ہے جام و سبو

    کبھی تو بام ثریا کو چوم ہی لے گا

    بہت لطیف ہے آدم کی جنبش ابرو

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY