جلے چراغ بجھانے کی ضد نہیں کرتے

چاندنی پانڈے

جلے چراغ بجھانے کی ضد نہیں کرتے

چاندنی پانڈے

MORE BYچاندنی پانڈے

    جلے چراغ بجھانے کی ضد نہیں کرتے

    اب آ گئے ہو تو جانے کی ضد نہیں کرتے

    کسی کی آنکھ میں آنسو ہمیں پسند نہیں

    دلوں کے زخم دکھانے کی ضد نہیں کرتے

    تمہارے نام کا بھی ذکر ہو نہ جائے کہیں

    غزل کے شعر سنانے کی ضد نہیں کرتے

    ہمارے سائے بھی رستے میں چھوڑ جاتے ہے

    ہمارا ساتھ نبھانے کی ضد نہیں کرتے

    خلا میں کوئی امارت کبھی نہیں ٹکتی

    وہاں مکان بنانے کی ضد نہیں کرتے

    یہ شہر سنگ ہے پتھر کے لوگ رہتے ہیں

    یہاں پہ فول کھلانے کی ضد نہیں کرتے

    زمین جیسا کہیں چاند بھی نہ ہو جائے

    زمیں پہ چاند کو لانے کی ضد نہیں کرتے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY