جھٹک کے چل نہیں سکتا ہوں تیرے دھیان کو میں

محمد سلیم طاہر

جھٹک کے چل نہیں سکتا ہوں تیرے دھیان کو میں

محمد سلیم طاہر

MORE BY محمد سلیم طاہر

    جھٹک کے چل نہیں سکتا ہوں تیرے دھیان کو میں

    اٹھائے پھرتا ہوں سر پر اک آسمان کو میں

    میں تجھ سے اپنا تعلق چھپا نہیں سکتا

    جبیں سے کیسے مٹا دوں ترے نشان کو میں

    یہ لوگ مجھ سے اداسی کی وجہ پوچھتے ہیں

    بتا چکا ہوں ترا نام اک جہان کو میں

    جو عہد کر کے ہر اک عہد توڑ ڈالتا ہے

    زبان دوں گا بھلا ایسے بے زبان کو میں

    میں فتح کر کے کوئی قلعہ کیا کروں گا سلیمؔ

    لو آج توڑتا ہوں تیر کو کمان کو میں

    مآخذ:

    • Book: Ghazal Calendar-2015 (Pg. 04.07.2015)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites