جہاد عشق میں ہم عاشقوں کو وار دینا

محمد اظہار الحق

جہاد عشق میں ہم عاشقوں کو وار دینا

محمد اظہار الحق

MORE BYمحمد اظہار الحق

    جہاد عشق میں ہم عاشقوں کو وار دینا

    یہ قربانی خدا توفیق دے سو بار دینا

    بصارت خوب ہے اب منصفی بھی اس کی دیکھو

    اب اس سے آئینہ لے کر اسے تلوار دینا

    زباں کے زہر کی کوئی گواہی دے نہ پائے

    اگر بوسہ دیا بھی تو پس دیوار دینا

    سنے ہیں تذکرے اس کے مگر دیکھی نہیں ہے

    محبت پاس سے گزرے تو کہنی مار دینا

    ترا مٹی کو مٹی کے لیے تیار کرنا

    اسے شکر بھرے لب پھول سے رخسار دینا

    مآخذ:

    • کتاب : Beesveen Sadi Ki Behtareen Ishqiya Ghazlen (Pg. 194)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY