جی ترستا ہے یار کی خاطر

شیخ ظہور الدین حاتم

جی ترستا ہے یار کی خاطر

شیخ ظہور الدین حاتم

MORE BYشیخ ظہور الدین حاتم

    جی ترستا ہے یار کی خاطر

    اوس سیں بوس و کنار کی خاطر

    تیرے آنے سے یو خوشی ہے دل

    جوں کہ بلبل بہار کی خاطر

    ہم سیں مستوں کو بس ہے تیری نگاہ

    توڑنے کوں خمار کی خاطر

    بس ہے اوس سنگ دل کا نقش قدم

    میری لوح مزار کی خاطر

    عمر گزری کہ ہیں کھلی حاتمؔ

    چشم دل انتظار کی خاطر

    RECITATIONS

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    جی ترستا ہے یار کی خاطر فصیح اکمل

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY